موضوعات کئی اور ان پر ایک رائے کی رائے

میں اردو شاعری کہنے کی معاملے میں مکمل طور پر اناڑی ہوں پھر فی اعتکاف کے دوران ایک شب فرط جذبات میں یہ چند بے ربط اور بے وزن سطریں لکھ ڈالیں اور خود پسندی میں انکو ایک نظم کا نام دے دیا. بے وزن سہی پر دل سے نکلی تھیں یہ سطور لہٰذا سوچا کہ یہاں پر یعنی اس بلاگ پر محفوظ کر لیتا ہوں کہ سند رہے

image

میں گناہوں میں لتھڑا ہوا
روش دنیا میں جکڑا ہوا
اب ہو گیا ہوں کچھ روز کے لئے
تیرے گھر کا مہمان اے مولا
تیری عظمت کی دمک
تیری رحمت کی چمک
تیرا کرم اور تیری محبت پر
ہوا بڑا حیران اے مولا
ہوا میں بیمار بھی
لگی مجھکو بھوک بھی
تیری تیمارداری پر
اور تیری مہمانوازی پر
اب ہوں رطب السان اے مولا
وقت بیت چکا میرا یہاں
قابل امتحان میں اب بھی نہیں
یا رب
تو بخش دے بے سبب
تو ہی توہے مالک دو جہان ہے اے مولا
Advertisements

Comments on: "ہوا تیرے گھر کا مہمان اے مولا – حمد" (1)

  1. الله نے دس دن تمہیں اپنے گھر کا مہمان بنایا ہے اب تم باقی پورا سال الله کو اپنے دل کا مہمان بنا کر رکھنا

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

ٹیگ بادل

%d bloggers like this: